مقبوضہ جموں وکشمیر کی خواتین کی حالت زار کو اجاگر کرنے کے لئے اسلام آباد میں اے پی ایچ سی-اےجے کے کا مظاہرہ

اسلام آباد ، 25 نومبر : کل جماعتی حریت کانفرنس کے آزاد جموں وکشمیر نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوجیوں کے ذریعہ خواتین کے مظالم کی طرف دنیا کی توجہ مبذول کروانے کے لئے اسلام آباد میں نیشنل پریس کلب کے باہر ایک احتجاجی مظاہرہ کیا۔

حریت رہنماؤں نے مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بھارتی فوجیوں نے کشمیریوں کی زندگیوں کو جہنم بنا دیا ہے اور مقبوضہ علاقے میں روزانہ کی بنیاد پر بے گناہ لوگوں کو ہلاک کررہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ہندوستان نے ہزاروں کشمیریوں کو قید اور لاپتہ کیا ہے جس میں خواتین کو آدھی بیوہ خواتین کی ایک بڑی تعداد پیش کی گئی ہے۔

رہنماؤں نے کہا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوجیں بھارتی افواج کے وسیع پیمانے پر مظالم کی وجہ سے ایک انسانی المیے کی طرف جارہی ہیں جب کہ کشمیری خواتین بھارتی مظالم کی بھینٹ چڑھ رہی ہیں۔ انہوں نے عالمی برادری سے مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوجیوں کا انسانی حقوق کی پامالیوں کو روکنے اور کشمیریوں کو ان کا حق خودارادیت دلانے میں اپنا کردار ادا کرنے کا مطالبہ کیا۔

دریں اثنا ، پاسبانِ حریت جموں و کشمیر کے چیئرمین ، عزیر احمد غزالی نے مظفر آباد میں ایک بیان میں مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوجیوں کے لوگوں سے زمین چھیننے پر ہندوستان کی مذمت کرتے ہوئے اسے سراسر ریاستی دہشت گردی قرار دیا ہے۔ انہوں نے اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں سے کہا کہ وہ مقبوضہ جموں و کشمیر میں مودی کی زیرقیادت فاشسٹ حکومت کی بھارتی فوجیوں پر غیر انسانی اقدامات کا نوٹس لیں۔