حق خود ارادیت کا مطالبہ کرنے پرہزاروں بے گناہ کشمیری سالہاسال سے جیلوں میں نظربند ہیں، شبیر ڈار

سرینگر : غیر قانونی طور پربھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میںمسلم کانفرنس کے چیئرمین شبیر احمد ڈاراور انسانی حقوق کے علمبردار محمد احسن اونتو نے کہا ہے کہ ہزاروں بے گناہ کشمیری سالہا سال سے جموںوکشمیر اور بھارت کی مختلف جیلوں میں نظربند ہیںجن کا واحد جرم بھارت کی ریاستی دہشت گردی کے خلاف اور حق خود ارادیت کے مطالبے کے حق میں آواز بلند کرنا ہے۔کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق شبیر احمد ڈار نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاکہ انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیمیں کئی دہائیوں سے ضمیر کے ان قیدیوں کے ساتھ ہونے والے غیر انسانی سلوک کے بارے میں معلومات فراہم کررہی ہیں یہاں تک کہ قیدیوں کے بارے میںاقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے نے ان آزادی پسندوں کو درپیش مشکلات کے ازالے کے لئے متعدد بار بھارتی حکام سے رجوع کیا ہے۔
شبیر احمد ڈارنے کہاکہ اب کورونا وائرس کی اس وبا کے دوران فاصلہ برقرار رکھنے کی عالمی ادارہ صحت کی جاری کردہ ہدایات کی خلاف ورزی کی جارہی ہے جس کی وجہ سے وائرس سے سینکڑوں قیدی متاثر ہوئے ہیں اور ایسے تمام مریضوں کے لئے مناسب طبی امداد فراہم نہ کرناایک سنگین مسئلہ بن چکا ہے۔ انہوںنے کہاکہ عدلیہ نے حکام کو جیلوں میں قیدیوں کی تعداد کم کرنے کی ہدایت کی ہے لیکن جموں وکشمیر میں لوگوں کو رہا کرنے کے بجائے نئی گرفتاریاں کی جارہی ہیں اور اس طرح ان ہزاروں حریت پسندوں کی زندگیوں کو خطرے میں ڈالا جارہا ہے۔مسلم کانفرنس کے چیئرمین نے کہاکہ قابض حکام کوعالمی ادارہ صحت کے رہنما اصولوں پرعمل کرتے ہوئے ان تمام قیدیوں کو رہا کرنا چاہیے جن پر جھوٹے الزامات لگائے گئے ہیں اور اب کالی کوٹھریوں میں رکھ کرجہاں اس جان لیوا بیماری کے پھیلاو ٴ کے بہت زیادہ امکانات ہیں، انہیں اپنی جان بچانے کے حق سے محروم کیاجارہا ہے۔انسانی حقوق کے کارکن اور انٹرنیشنل فورم فار جسٹس اینڈ ہیومن رائٹس کے چیئرمین محمد احسن اونتو نے ایک بیان میں کہاہے کہ سینکڑوں کشمیری مختلف جیلوں میں نظربند ہیں اور ان کی غیر قانونی نظربندی کو طول دینے کیلئے انہیں قانونی مدد حاصل کرنے سے بھی روکا جارہا ہے۔انہوںنے کہاکہ کشمیری نظربندوں مشتاق احمد ڈار ، من میت سنگھ ، سعادت خان ، فہد خان اور انکی والدہ ،سجاد احمد بٹ، نثار احمد ، عمر نور، اختر حسین عباس ، فاروق احمد ،طارق شاہ ، ظہور احمد ، منظور احمد ڈار، احسان مجید گلزار، خورشید شاہ اور سنجے خان مختلف جیلوں میں نظربند ہیں جن کی نظربندی کو 5سی15برس تک کا عرصہ ہو چکا ہے۔ انہوںنے اقوام متحدہ اور عالمی عدالت انصاف پر زوردیا کہ وہ مقبوضہ جموںوکشمیر میں بھارتی قابض انتظامیہ کی انتقامی کارروائی کا نشانہ بننے والے ان کشمیریوں کی رہائی کیلئے بھارت پر دبائو بڑھائیں۔