یومِ استحصال کے موقع پر وزیر اعظم کا آزاد جموں و کشمیر کی اسمبلی سے خطاب کا اعلان

گزشتہ برس 5 اگست کےغیر قانونی اقدامات کےبعد سےاہلِ کشمیر کو بھارت کےہاتھوں ظالمانہ/سفاک فوجی محاصرےکاسامنا ہےجبکہ مقبوضہ وادی میں آبادی کےتناسب میں تبدیلی کی کوششیں بھی جاری ہیں۔ ٹوئیٹ

اسلام آباد  یومِ استحصال کے موقع پر اہلِ کشمیرسےاظہارِ یکجہتی کیلئے وزیر اعظم کا آزاد جموں وکشمیر کی اسمبلی سے خطاب کا اعلان۔ گزشتہ برس 5 اگست کےغیر قانونی اقدامات کےبعد سےاہلِ کشمیر کو بھارت کےہاتھوں ظالمانہ/سفاک فوجی محاصرےکاسامنا ہے جبکہ مقبوضہ وادی میں آبادی کےتناسب میں تبدیلی کی کوششیں بھی جاری ہیں۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم عمران خان نے یوم استحصال کے موقع پر آزاد کشمیر کی اسمبلی سے خطاب کا اعلان کیا ہے۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئیٹر پر جاری پیغام میں وزیر اعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ وہ یومِ استحصال کے موقع پراہلِ کشمیرسےاظہارِ یکجہتی کے لیے آج آزاد جموں وکشمیر کی اسمبلی سے مخاطب ہوں گے۔ انہوں نے اپنے پیغام میں کہا کہ گزشتہ برس 5 اگست کےغیر قانونی اقدامات کےبعد سےاہلِ کشمیر کو بھارت کےہاتھوں ظالمانہ اور سفاک فوجی محاصرےکاسامنا ہےجبکہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ وادی میں آبادی کےتناسب میں تبدیلی کی کوششیں بھی جاری ہیں۔
وزیر اعظم نے اپنے ٹوئیٹ میں کشمیریوں کے حقوق کے لیے جد و جہد جاری رکھنے کے عزم کو دوہراتے ہوئے کہا کہ ہندوستان نےمقبوضہ جموں و کشمیر پرغیر قانونی قبضے کے ذریعے جن کشمیریوں کی آواز گُل کرنے کی کوشش کی میں بطورِ سفیر ان سب کی آواز بنا رہوں گا۔

ان کا کہنا تھا کہ برسوں بعد میری حکومت نے کشمیر کا مقدمہ نہایت مؤثر طور پر اقوام متحدہ میں اٹھایا اور مودی سرکار کی نسل پرست فسطائیت (ہندوتوا) کو بے نقاب کیا۔

وزیر اعظم نے ٹوئیٹر پیغام میں کہا کہ ہم نے اہلِ کشمیر کی امنگوں اور اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے حوالے سے اپنے عزائم اور مؤقف کو گزشتہ روز جاری ہونے والے پاکستان کے سیاسی نقشے میں بھی اجاگر اور نمایاں کر دیا ہے۔