مولانا فضل الرحمان کے بھائی کراچی کے ضلع وسطی کے ڈپٹی کمشنر تعینات

بندہ نوازی کی انتہاء، سندھ حکومت نے عدالتی احکامات ہوا میں اڑادئیے۔۔وزیراعلیٰ سندھ کے حکم پر مولانا فضل الرحمان کے بھائی ضیاء الرحمان کو کراچی کے ضلع وسطی کا ڈپٹی کمشنر تعینات کردیا گیا۔مولانا فضل الرحمان کے بھائی کی تعیناتی کا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا۔

ضیا الرحمان کا تعلق پرووینشل مینجمنٹ سروس کے پی کے سے ہے، ضیا الرحمان کی خدمات سندھ حکومت کے حوالے کی گئی تھیں، اُنہیں تاحکم ثانی ڈپٹی کمشنر ضلع وسطی تعینات کیا گیا ہے۔

ضیا الرحمان کو فرحان غنی کی جگہ ڈی سی سینٹرل تعینات کیا گیا ہے، جبکہ فرحان غنی کا تبادلہ کرکے ایڈیشنل سیکریٹری لوکل گورنمنٹ تعینات کردیا گیا۔

اطلاعات کے مطابق مولانا فضل الرحمان کے بھائی کی تعیناتی عدالتی احکامات کی کھلم کھلا خلاف ورزی ہے۔ سپریم کورٹ کے حکم پر متعدد افسران کو ہٹایا گیا لیکن اسکے باوجود مولانا فضل الرحمان کے بھائی کی تعیناتی ہوئی۔ خیال رہے کہ مولانا فضل الرحمان کے بھائی کا تعلق خیبرپختونخوا سے ہے۔

وزیر اطلاعات سندھ سید ناصر حسین شاہ نے مولانا فضل الرحمان کے بھائی کی تعیناتی کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کا بھائی ہونا کوئی جرم نہیں ہے۔ ضیاء الرحمان خیبر پخنوتخوا میں بھی انتظامی عہدوں پر فائض رہ چکے ہیں، وہ کمشنر افغان رفیوجی اور ڈی سی خوشاب بھی رہ چکے ہیں۔

واضح رہے کہ مولانا فضل الرحمان کے بھائی ضیاء الرحمان کے خلاف نیب کی تحقیقات بھی چل رہی ہیں۔ چیئرمین نیب نے ستمبر 2018 میں مولانا کے بھائی ضیاء الرحمان کے خلاف تحقیقات کی منظوری دی تھی۔

چیئرمین نیب جسٹس تحقیقات کی ہدایت کرتے ہوئے کہا تھا کہ بتایا جائے کہ ضیاء الرحمان سول سروس کے بغیر بطور کمشنر افغان مہاجرین کیسے تعینات ہوئے اور دو سال تک اس عہدے پر کس طرح برا جمان رہے؟

مولانا فضل الرحمان کے بھائی ضیاء الرحمان پی ٹی سی ایل میں ملازم بھارتی ہوئے تھے اور اسکے بعد وہ ڈپٹی کمشنر (ڈی سی) خوشاب اور مختلف بڑے عہدوں پر فائز رہے۔

دوسری جانب مولانا فضل الرحمان کے بھائی کی تعیناتی کچھ روز قبل بلاول اور آصف زرداری کی ملاقات کا نتیجہ بتایا جارہا ہے۔

via siasat news